وقار یونس کا رویہ برداشت سے باہر ہوچکا، ٹیم میں واپسی کی امیدیں چھوڑ دیں

لاہور:قومی ٹیم کے فاسٹ باؤلر محمد عامر کا کہنا ہے کہ پاکستان کرکٹ ٹیم میں واپسی کی امیدیں چھوڑ دی ہیں۔ کم بیک کو نہیں دیکھ رہا، وقار یونس کا رویہ برداشت سے باہر ہوچکا ہے۔ نیوزی لینڈ میں پاکستان ٹیم کو بے عزت نہیں کیا ہمارے لڑکوں کی حرکتیں خراب تھیں جنکی سزا انکو ملی۔
اپنے ایک ویڈیو بیان میں انہوں نے کہا کہ پی ایس ایل سے پہلے مجھے ذاتی طور پر دھچکا لگا کہ فائنل سے ایک دو دن پہلے ٹیم کا اعلان کردیا گیا، ہیڈ کوچ مصباح الحق صاحب ہی بتا سکتے ہیں کہ انہوں نے ٹیم کا اعلان پی ایس ایل مکمل ہونے سے پہلے کیوں کیا۔
فاسٹ باؤلر کا کہنا تھا کہ میں نے ٹویٹر پر مصباح صاحب اس لئے لکھا کہ وہ بڑے لوگ ہیں جن کے پاس پاور ہوتی ہے وہ صاحب ہی ہوتے ہیں۔ وقار یونس کا رویہ بہت برداشت کیا،اب بات برداشت سے باہر ہوچکی ہے۔ برداشت کرنے کی حد ہوتی ہے، وقار یونس جب سسٹم میں نہیں تھے تب کی ریٹائرمنٹ دی تھی۔
محمد عامر کا کہنا تھا کہ ورلڈ کپ سے پہلے مینجمنٹ کو بتایا تھا کہ ورک لوڈ برداشت نہیں کرسکتا۔ میں ورلڈ کپ کا میچ بھی انجری کے باوجود کھیلا۔ وقار یونس نے سوال کے جواب میں کہا کہ عامر نے ورک لوڈ کی وجہ سے کرکٹ نہیں چھوڑی، تو وقار یونس بتائیں کس وجہ سے کرکٹ چھوڑی، مجھے میری باڈی کا پتا ہے کہ میں کتنا ورک لوڈ برداشت کرسکتا ہوں۔
انہوں نے کہا کہ وقار یونس تو ٹیم کو چھوڑ کر گئے بعد میں آئے آپ کو کیسے پتا میری انجری ہے یا نہیں۔ کیسے کہہ سکتے ہیں کہ ورک لوڈ کی وجہ سے نہیں چھوڑی تو اس لئے کہا کہ آپ بتائیں کیسے چھوڑی۔

بات کو جاری رکھتے ہوئے فاسٹ باؤلر کا کہنا تھا کہ چیف سلیکٹر کے لئے بہترین چوائس ہیں۔ پاکستان کے لئے ان کے 18 سے 20 ہزار رنز ہیں۔ ورلڈ کلاس کھلاڑی ہیں۔ اگر میرے بس میں ہو تو محمد یوسف کو فوری طور پر چیف سلیکٹر بنا دوں۔

محمد عامر کا کہنا تھا کہ ڈیپارٹمنٹل کرکٹ بند ہوئی تو اسکا متبادل ہونا چاہئے تھا۔ جب کوئی کرکٹ شروع کرتا ہے تو پاکستان ٹیم کی امیدسے نہیں آتا بلکہ ڈیپارٹمنٹل اور فرسٹ کلاس میں کھیلتا کچھ لڑکوں نے بیس بیس سال دئیے کرکٹ کو لیکن مشکل ہوتا ہے انکی زندگی کیسی گزر رہی ہوگی۔ نیوزی لینڈ میں پاکستان ٹیم کو بے عزت نہیں کیا ہمارے لڑکوں کی حرکتیں خراب تھیں جنکی سزا انکو ملی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں