”دوسال مشکل گزرے،اپوزیشن این آراو کا شورمچاتی رہی،اب آگے بڑھنے کاوقت آگیا“

اسلام آباد: (رائل نیوز) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ حکومت نے 2 سال بہت مشکل سے گزارے، ملک کو ڈیفالٹ ہونے سے بچایا۔ کچھ لوگ کہتے تھے کہ این آر او دیں تو قانون سازی میں ساتھ دیں گے۔ تاہم اب آگے بڑھنے کا وقت آ گیا ہے۔
لاہور راوی ریور فرنٹ اربن ڈویلپمنٹ پراجیکٹ کا سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ آلودگی خطرناک حد تک پہنچ چکی ہے، اس لئے ماڈرن شہر ناگزیر ہو چکا، اس منصوبے سے سرمایہ کاری کو بھی فروغ ملے گا۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ گزشتہ 15 سال میں لاہور کا پانی 800 فٹ نیچے چلا گیا، پنجاب میں زرعی علاقہ کم ہوتا جا رہا ہے۔ دریائے راوی ایک نالہ بن کر رہ گیا ہے۔ اس لئے راوی اربن ڈیویلپمنٹ منصوبہ ناگزیر ہو چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ لاہور کو بچانا ہے تو راوی منصوبہ بنانا ہوگا۔ یہ منصوبہ نہ بنا تو لاہور کا حال کراچی جیسا ہو جائے گا۔ سیوریج کا پانی صاف کرکے راوی میں ڈالا جائے گا۔ راوی کے پاس بننے والے شہر کی عمارتیں اونچی بنائیں گے۔ اس منصوبے پر 50 ہزار ارب روپے لاگت آئے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ اس منصوبے میں اوورسیز پاکستانیوں کو سرمایہ کاری کیلئے بڑے مواقع دیئے جائیں گے۔ راوی اربن پراجیکٹ میں لوگوں کو روزگار ملے گا۔ کنسٹرکشن کمپنی کے ساتھ مزید 40 صنعتیں چلیں گی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ یہ اسلام آباد کے بعد دوسرا منصوبہ ہوگا جہاں نیا شہر بننے جا رہا ہے۔ اس منصوبے کی کارکردگی کا خود جائزہ لوں گا۔ نئے بننے والے شہر کے اردگرد 60 لاکھ درخت اگائے جائیں گے۔

بعد ازاں وزیراعظم سے گورنر پنجاب چودھری محمد سرور نے ملاقات کی جس میں سیاسی اور حکومتی امور سمیت دیگر ایشوز کے بارے میں بات چیت کی گئی۔ گورنر نے یونیورسٹیز اصلاحات اور پنجاب آب پاک اتھارٹی کے اقدامات بارے بتایا۔

اس موقع پر عمران خان کا کہنا تھا کہ حکومت اداروں کی مضبوطی کیلئے عملی اقدامات کر رہی ہے۔ عوام کی ترقی اور خوشحالی حکومت کی اولین ترجیح ہے۔

گورنر پنجاب نے بتایاکہ یونیورسٹیز کے مسائل کو حل کرنے کیلئے تمام اقدامات کو یقینی بنا رہے ہیں جبکہ صاف پانی کی فراہمی کیلئے آب پاک اتھارٹی تیزی سے کام کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کرپشن میں ملوث افسر کو نوکری سے فارغ کر دیا جائے گا، وزیراعظم عمران خان

ادھر وزیراعظم عمران خان نے صوبہ پنجاب کی صورتحال پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہاں نچلی سطح پر بہت زیادہ کرپشن ہے، جو افسر بھی ملوث ہوگا، نوکری سے فارغ کر دیا جائے گا۔

انہوں نے پولیس اور پٹوار کلچر ختم کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پولیس اور بیوروکریٹس کو بہت زیادہ الاؤنسز دیئے، تنخواہوں بھی بہتر کر دیں، اب رزلٹ دیں۔

تفصیل کے مطابق لاہور میں وزیراعظم عمران خان کے زیر صدارت ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس ہوا جس میں پنجاب بیوروکریسی اور پولیس افسران نے شرکت کی۔

وزیراعظم کا دوران خطاب کہنا تھا کہ جو غلط کام یا کرپشن کرے گا، اس پولیس افسر اور بیوروکریٹ کو فارغ کیا جائے گا۔ صوبہ پنجاب میں نچلی سطح پر بہت ہے، جسے ہر جگہ سے ختم ہونا چاہیے۔

انہوں نے حکم دیا کہ پنجاب میں تھانہ کلچر کو تبدیل جبکہ پولیس اور پٹوار کلچر سے کرپشن کو ختم کیا جائے۔ پنجاب کے تھانے کے معاملات کو بہتر بنائیں۔ ہم نے پولیس اور بیوروکریٹس کو بہت الاؤنسز دیئے، تنخواہیں بھی بہتر کر دیں، اب رزلٹ دیں۔ بیوروکریسی کو جو ٹاسک دیئے، اس پر عملدرآمد کرنا چاہیے۔

وزیراعظم نے بیوروکریسی اور پولیس افسران کو حکم دیا کہ لوگوں کیساتھ اچھے سلوک سے پیش آئیں، عوام کو جتنا ہو سکے ریلیف دیں۔ انہوں نے کورونا وائرس کیخلاف زبردست اقدام پر پنجاب حکومت اور بیوروکریسی کی تعریف کی۔

دوسری جانب خبریں ہیں کہ ممبران قومی اسمبلی نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں شکایات کی بھرمار کر دی ہے۔ وزیراعظم نے سخت اظہار برہمی کرتے ہوئے وزیراعلیٰ کو اگلے ہفتے فیصل آباد جانے کا حکم دیدیا ہے۔

ذرائع کے مطابق ممبران قومی اسمبلی کا کہنا تھا کہ ہمارے ضلع میں ایس ایچ اوز اور ڈی ایس پیز کھل کر کرپشن کر رہے ہیں جبکہ علاقوں کو ترقیاتی فنڈز سے محروم رکھا گیا ہے۔

انہوں نے وزیراعظم سے شکایت لگائی کہ متعلقہ عہدیداروں سے پوچھیں کہ ہمارے حلقوں کو فنڈز کیوں نہیں دیتے؟ بیوروکریسی حکومت کا ساتھ نہیں دیتی، ہر جگہ مسائل ہی مسائل ہیں، نوٹس لیا جائے۔

ممبران قومی اسمبلی نے دعویٰ کیا کہ پنجاب میں آٹے اور چینی کی مارکیٹ میں مہنگے داموں فروخت میں محکمہ خوراک ملوث ہے۔ وزیراعظم نے اراکین کی شکایات کا نوٹس لیتے ہوئے کہا کہ جو بھی ترقیاتی اور انتظامی معاملات ہیں، ان کو فوری حل کیا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ مجھے پتا ہے کہ پولیس اور پٹوار کلچر میں کرپشن ہو رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: وزیراعظم سے وزیراعلیٰ پنجاب کی ملاقات، کورونا کی صورت حال پر بریفنگ

اس سے قبل وزیراعظم ایک روزہ دورے پر لاہور پہنچے جہاں ان سے وزیراعلیٰ پنجاب نے ملاقات کی۔ عثمان بزدار نے کورونا کی صورت حال اور ہاؤسنگ پراجیکٹس سے متعلق بریفنگ دی۔ عمران خان نے ہدایت کی کہ پنجاب میں ترقیاتی کاموں کو مزید تیز کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں: حکومتی اقدامات کے باعث کورونا کیسز ختم ہو رہے ہیں: وزیراعظم عمران خان

عمران خان نے قومی رابطہ کمیٹی برائے ہاؤسنگ و تعمیرات اجلاس کی صدارت بھی کی۔ وزیراعلیٰ نے عمران خان کو ریور راوی فرنٹ اتھارٹی کے بارے میں بھی آگاہ کیا۔ وزیراعظم نے ریور راوی فرنٹ اتھارٹی کے اقدام کو سراہا۔

وزیراعظم سے فیصل آباد کے ارکان قومی اسمبلی نے بھی ملاقات کی۔ انہوں نے ترقیاتی اور فلاحی منصوبوں سے آگاہ کیا۔ اس موقع پر عمران خان کا کہنا تھا فیصل آباد معاشی لحاظ سے اہم حیثیت کا حامل ہے، حکومت صنعتی شعبہ کی ترقی پر بھرپور توجہ دے رہی ہے۔ کاروباری طبقے اور تعمیراتی سیکٹر کو مراعات سے ترقی ملے گی۔ چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار کیلئے اقدامات کر رہے ہیں۔ کاروباری سرگرمیوں کے فروغ کیلئے ہر ممکن تعاون کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں