کرونا وائرس،عالمی بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک کی پاکستان کو کروڑوں ڈالر کی پیشکش

کورونا وائرس سے لڑنے کے لیےعالمی بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو مالی امداد کی پیشکش کر دی۔تفصیلات کے مطابق پاکستان میں بھی کورونا وائرس نے اپنے پنجے گاڑھنا شروع کر دئیے،اب تک پاکستان میں کورونا وائرس کے 245 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جس کے پیش نظر عالمی بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان کو مالی امداد کی پیشکش کی ہے۔
ایشیائی ترقیاتی بینک پاکستان کو مجموعی طور پر 35 کروڑ ڈالر فراہم کرے گا۔جس میں سے 5 کروڑ ڈالر کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے دئیے جائیں گے۔ عالمی بینک نے بھی 18 کروڑ 80 لاکھ ڈالر دینے کی پیشکش کر دی، رقم فوری طور پر اسپتال منتقل کی جائے گی۔پاکستان اور عالمی مالیاتی اداروں کے درمیان معاہدے جلد متوقع ہے۔

اے ڈی بی کی طرف سے بھی 5 کروڑ ڈالر فوری جاری کیے جانے کا امکان ہے۔جب کہ دوسری جانب انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) نے حکومتوں پر زور دیا ہے کہ عوام کو کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے عالمی طبی بحران کے معاشی اثرات سے تحفظ فراہم کیا جانا چاہیے. واشنگٹن میں آئی ایم ایف کی جانب سے جاری گائیڈ لائنز میں کہا گیا کہ جو سب سے زیادہ متاثر ہیں انہیں اپنی غلطی کے بغیر دیوالیہ کا شکار نہیں ہونا چاہیے، سیاحت پر انحصار کرنے والے ملک میںایک ریسٹورنٹ یا قرنطینہ کی وجہ سے بند ہونے والی فیکٹری کے ملازمین کو اس بحران میں تعاون کی ضرورت ہے.آئی ایم ایف نے بتایا کہ ان کے پاس 50 ارب ڈالر ہنگامی تعاون کے لیے دستیاب ہیں جسے وہ وائرس سے متاثرہ ممالک کی مدد کریں گے بیان میں آئی ایم ایف کی مینیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا نے کہا کہ ہمیں اس کے بدلے صرف یہ ضمانت چاہیے کہ لوگ پیسوں کی وجہ سے مریں گے نہیں.فنڈ کا اعلان کرتے ہوئے آئی ایم ایف کے سربراہ نے یہ بھی کہا کہ ادارہ مالی تعاون کے لیے ہم سے رابطہ کرنے والی ابھرتی ہوئی مارکیٹوں کو 40 ارب ڈالر فراہم کرسکتا ہے انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف اپنے رکن ممالک، بالخصوص خطرات کا سامنا کرنے والے، کے ساتھ تعاون کرنے کے لیے پرعزم ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں