Home / Latest News / علیؓ مرتضٰی کا طرزِ حیات
علیؓ مرتضٰی کا طرزِ حیات

علیؓ مرتضٰی کا طرزِ حیات

آپؓ نے سب سے پہلے امت میں رسول اﷲ ﷺ کے ساتھ عبادت کا شرف حاصل کیا، دعوت ذوی العشیرۃ میں رسولؐ کی تائید و نصرت کا اعلان کیا۔ شب ہجرت کفار مکہ کی پروا نہ کرتے ہوئے کمال جرات مندی کے ساتھ رسول ؐکے بستر پر سوئے۔ مواخات میں رسولؐ نے انہیں اپنا بھائی قرار دیا۔ اسلامی ریاست قائم ہونے کے بعد اس کے تحفظ میں بھی سب سے آگے رہے۔ بدر کے میدان میں کفار کے سرداروں کے غرور کو خاک میں ملایا۔ جنگ احد میں رسول ؐ کے لیے سینہ سپر ہوگئے۔ رسول ؐ کے زخموں کا علاج کیا، جنگ خندق میں عمر ابن عبدود جیسے جری کو پچھاڑا۔ خیبر کے ناقابل تسخیر قلعہ کو تسخیر کرکے مرحب جیسے عرب بہادر کو جہنم کی راہ دکھائی۔ علیؓ ہی نے فتح مکہ کے روز رسول ؐ کے کندھوں پر سوار ہوکر خانہ کعبہ کو بتوں سے پاک کرکے بت شکن کا اعزاز حاصل کیا۔
سخی ایسے کہ رات بھر باغ میں مزدوری کرکے حاصل ہونے والی جو سے پکنے والی روٹیوں کو عین افطار کے وقت سوالی کو دے دیا اور تین دن ایسا ہی ہوتا رہا۔ رسول اکرم ﷺ علیؓ فاطمہؓ حسنؓ و حسینؓ تین دن بھوکے رہے۔ جس پر سورہ ہل اتی نازل ہوئی۔ (ریاض النضرۃ)

حضرت علیؓ کی زندگی کے اہم ترین نمونوں میں سے ایک آپ کا علم ہے۔ چناںچہ یہ بات زبان زد خاص و عام ہے کہ قرآن مجید اور فرمودات پیمبر ؐکے بعد علیؓ کے کلام سے بہتر کوئی کلام نہیں۔ اور کیوں نہ ہو رسولؐ نے فرمایا میں شہر علم ہوں، علیؓ اس کا دروازہ ہے۔ اور پیمبر ﷺ کو علیؓ پر اس قدر انحصار تھا کہ علیؓ کو حکم دیا اے علیؓ تم لوگوں کو وضو اور سنت کی تعلیم دو۔ (طبقات البریٰ)

خاتم الانبیا ﷺ نے ایک مقام پر ارشاد فرمایا: ’’علم قضا کو دس حصوں میں تقسیم کیا گیا نو حصے علیؓ کو اور ایک حصہ پوری دنیا میں تقسیم کیا گیا۔ جناب علیؓ کا فرمان ہے: ’’ ہم اہل بیت اﷲ و رسول ﷺ کے پیغام سے سب سے زیادہ آگاہ ہیں۔‘‘ (طبقات الکبریٰ)

ایک موقع پر فرمایا: ’’ جو میں نے رسول اﷲ ﷺ سے سنا، چاہے حدیث ہو یا کچھ اور، اسے فراموش نہیں کیا۔‘‘ (انساب الاشراف)

نیز یہ بھی فرماتے ہیں کہ خدا کی قسم کوئی آیت ایسی نازل نہیں ہوئی جس کے بارے میں مجھے علم نہ ہو کہ کہاں نازل ہوئی اور کس سلسلے میں نازل ہوئی

(بہ حوالہ: انساب الاشراف جلد1صفحہ 99)

Your ads will be inserted here by

Easy Plugin for AdSense.

Please go to the plugin admin page to
Paste your ad code OR
Suppress this ad slot.

آپؓ نے فرمایا کہ میں اگر سورہ فاتحہ کی تفسیر لکھنا چاہوں تو 70 اونٹوں کے برابر ہوجائے۔

( التراتیب الاداریہ جلد3 صفحہ 183)

علماء کے درمیان عہد قدیم سے یہ بات مشہور ہے کہ علیؓ کے علاوہ کسی اور میں سلونی قبل ان تفکدونی کہنے کی جرات نہ ہوئی۔ (جامع بیان العلم )

علی ابن طالبؓ کا فرمان ہے: ’’خدا کی قسم یہ پیوند دار جوتیاں میرے نزدیک تم جیسے لوگوں پر حکومت کرنے سے زیادہ بلند ہیں۔ مگر یہ کہ اس حکومت کے ذریعے کسی حق کو اس کی جگہ قائم کروں یا کسی امر باطل کو اکھاڑ پھینکوں۔‘‘

اسلام کی یہ عظیم و نمایاں شخصیت جہان علم و فکر اور تاریخ بشری میں ہمیشہ باقی رہنے والی شجاعت، عفت، طہارت اور جرات و عدالت کی تاب ناک روشنی کا یہ آفتاب و ماہ تاب21 رمضان کو کوفہ میں غروب ہوگیا۔ مگر اس کے نظریات و فرمودات و ارشادات آغاز شہادت سے لے کر جب تک دنیا ہے، تب تک حیات انسانی کے مراحل اور راہوں میں جاری و ساری رہیں گے۔

آج بھی علیؓ کی طرز زندگی ظلم، وحشت، دہشت گردی اور کفر و نفاق کے لیے موت ہے۔ مسلم دنیا جو اس وقت مصائب و آلام میں گرفتار ہے، علی ؓ کی زندگی اختیار کرکے مصائب و آلام پر قابو پا سکتی ہے اور دنیائے شیطانی کو شکست سے دوچار کر سکتی ہے۔ یہ وقت کی ضرورت ہے کہ امت مسلمہ سیرت امیر المومنین علی ابن ابی طالبؓ پر چلتے ہوئے استعماری قوتوں کے مقابل خیبر شکن جرات کا مظاہرہ کرے۔ عدل و انصاف کی راہ اپنائے اور علم و حکمت کے ساتھ ٹوٹا ہوا رشتہ مضبوطی کے ساتھ جوڑنے کے لیے مدینۃ العلم محمد مصطفی ﷺ کے در پر اپنا سر جھکالے تو کوئی طاقت کلمہ توحید کے پرستاروں کو زیر کرنے میں کام یاب نہیں ہو سکے گی۔

About editor editor

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Scroll To Top