ڈالر مزید سستا، سٹاک مارکیٹ میں بڑی مندی، انویسٹرز کو 120 ارب کا نقصان

لاہور:  ملک بھر میں روپے کے مقابلے میں ڈالر کی قدر مسلسل گرتی جا رہی ہے۔ انٹر بینک میں امریکی کرنسی 40 پیسے جبکہ اوپن مارکیٹ میں قدر 20 پیسے گر گئی جبکہ سٹاک مارکیٹ میں ایک مرتبہ پھر بڑی مندی دیکھی گئی جس کے بعد سرمایہ کاروں کو 120 ارب روپے کا نقصان ہوا۔

 ملک بھر میں کاروباری ہفتے کے تیسرے روز بھی ڈالر کی قدر میں گراوٹ دیکھی گئی، رواں ہفتے یہ تیسرا موقع ہے جب امریکی کرنسی کی قدر گر رہی ہے۔ پیر والے دن اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 50 پیسے، انٹر بینک میں 18 پیسے سستا ہوئی، منگل کو انٹر بینک میں امریکی کرنسی 28 پیسے، اوپن مارکیٹ میں 20 پیسے کی گراوٹ دیکھی گئی۔

کاروباری ہفتے کے تیسرے روز آج بھی ملک بھر میں ڈالر کے مقابلے میں روپیہ تگڑا ہوا، انٹر بینک میں امریکی کرنسی 40 پیسے سستی ہو کر 158 روپے 25 پیسے کی سطح پر پہنچ گئی۔

دوسری طرف انٹر بینک کی طرح اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر 20 پیسے سستا ہوا، جس کے بعد اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 158 روپے 60 پیسے ہو گئی ہے

دوسری طرف پاکستان سٹاک مارکیٹ میں غیر یقینی صورتحال کے باعث ایک مرتبہ پھر بڑی مندی دیکھی گئی جس کے بعد حصص مارکیٹ کا انڈیکس 4 سال 4 ماہ کی کم ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق مارکیٹ میں بڑی مندی کے بعد سرمایہ کاروں کے 120 ارب روپے سے زائد ڈوب گئے، 100 انڈیکس میں 2.2 فیصد کی گراوٹ ریکارڈ کی گئی، سٹاک مارکیٹ کا 100 انڈیکس کاروبار کے اختتام پر 30277 پوائنٹس کی سطح پر بند ہوا۔

ماہرین کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں کشیدگی اور عالمی سطح پر چین امریکا تجارتی جنگ کے باعث دنیا بھر میں انویسٹرز کافی پریشان ہیں، ملک میں مقامی اور غیر ملکی انویسٹرز پیسے لگانے سے گریزاں ہیں اور دیکھو اور انتظار کرو کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں۔

مارکیٹ ذرائع کے مطابق ایک موقع پر مارکیٹ میں انڈیکس 30299.38 پوائنٹس کی سطح پر پہنچ گیا تھا، تاہم مارکیٹ میں فلو آنے کے باعث انویسٹرز نے دلچسپی دکھائی اور انڈیکس دوبارہ 31000.67 پوائنٹس کی سطح پر پہنچ گیا۔ تاہم کاروبار کے اختتام پر ملکی سٹاک مارکیٹ پر سیاسی غیر یقینی اور مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کیے جانے کے اثرات حاوی ہوئے اور پاکستان سٹاک مارکیٹ کا 100 انڈیکس 723.23 پوائنٹس کی بڑی مندی کے بعد 30277.45 پوائنٹس کی سطح پر بند ہوا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں